اردوئے معلیٰ

Search

ہو چکے معتبر کمال مرے

تیر پہلو سے اب نکال مرے

 

دل تہہِ آب جا کے بیٹھ رہا

گھل گئے جھیل میں خیال مرے

 

یہ وہی لمحہِ جنون نہیں؟

کھا گیا تھا جو ماہ و سال مرے

 

کوزہ گر، نم خمیر میں ہے ابھی

نقش پھر ایک بار ڈھال مرے

 

دے گیا ذہن ہی جواب مرا

مطمئن ہوگئے سوال مرے

 

میں ، بہرحال نقشِ بد حالی

اور تو عین حسبِ حال مرے

 

میں اسے خود چھپا رہا ہوں مگر

خاک یوں زخم پر نہ ڈال مرے

 

جلد بازی میں پھینکتا کیوں ہے

سوچ کچھ اور استعمال مرے

 

خودکشی کارِ عیش ہے ناصر

اور کارِ جنوں محال مرے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ