اردوئے معلیٰ

Search

ہو گئے شاہِ سخن خاک نشیں بیٹھ رہے

پیار سے ہم کو بلاتی تھی زمیں بیٹھ رہے

 

تم بھی تھک ہار گئے درد کا درماں کرتے

ہم بھی لاچار پسِ مرگِ یقیں بیٹھ رہے

 

تو بہت دور، بہت دور ، بہت دور ہوا

ہم تری کھوج میں یونہی تو نہیں بیٹھ رہے

 

ان کا کیا ہے کہ فراموش ہوئے یا نہ ہوئے

راہ گم کردہِ الفت تھے کہیں بیٹھ رہے

 

وہ جو پرواز پہ نازاں تھے انہیں عمر ہوئی

تیری دہلیز پہ دھر دی ہے جبیں بیٹھ رہے

 

اور جاتے تو کہاں جاتے وفا کے باسی

دل کے ملبے پہ ترے دل کے مکیں بیٹھ رہے

 

بد نصیبی سے زمیں محوِ سفر تھی ، اور ہم

وہ مسافر ہیں کہ جو اپنے تئیں بیٹھ رہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ