اردوئے معلیٰ

 

ہیں سرپہ مرے احمد مشکل کشا کے ہاتھ

دیکھے تو مجھ کو نار جہنم لگا کے ہاتھ

 

لب پر مرے درود محمد ہو اُس گھڑی

زنجیر زندگی کی جو کھولے قضا کے ہاتھ

 

شبنم گلوں پہ جیسے مدینہ میں ہوں نبی

میرے بدن کو جب سے لگے ہیں صبا کے ہاتھ

 

نقش و نگار، حسن، نظارے بدل گئے

جب سے لگے جہان کو خیر الوریٰ کے ہاتھ

 

یارب مری حیات کا جب ہو چراغ گل

مسجد میں مصطفیٰ کے کھڑا ہوں اُٹھا کے ہاتھ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات