اردوئے معلیٰ

ہیں فلک پر چاند تارے، سرورِ کونین سے

پا رہے ہیں فیض سارے، سرورِ کونین سے

 

وہ نہ ہوتے تو نہ ملتیں دو جہاں کی نعمتیں

بخت جاگے ہیں ہمارے، سرورِ کونین سے

 

عرش و فرش و لوح و کرسی سب کا ہے ان سے وجود

خُلد کے رنگیں نظارے، سرورِ کونین سے

 

مِل چکے ہیں مِل رہے ہیں اور ملتے جائیں گے

بے سہاروں کو سہارے، سرورِ کونین سے

 

ہے حقیقت ہم پہ اے آصف مسلسل رات دن

رحمتیں ہیں رب کے پیارے، سرورِ کونین سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات