ہیں نصف بیاں سینہِ صد چاک کے گھاؤ

ہیں نصف بیاں سینہِ صد چاک کے گھاؤ

مصرع جو اٹھاتے ہو تو آنکھیں بھی اٹھاؤ

 

پس ماندہِ امواجِ تجسس کے جنوں نے

تھک ہار کے ڈالا ہے تہہِ آب پڑاؤ

 

اس دور کو معمول ہیں اعجاز تمہارے

ائے عہدِ گزشتہ کے تہی دست خداؤ

 

کچھ اور عمل ہو کہ ابھی کچھ نہیں بدلا

جادو کی چھڑی اور کسی سمت گھماؤ

 

ہر چند کہ سو رنگ سے دل مار کے دیکھا

اترے ہی نہیں گردشِ حالات کے چاؤ

 

ابھرا ہے تری جھیل سی آنکھوں کا تصور

کھیلا ہے مری پیاس نے اک آخری داؤ

 

سب کچھ ہے مرے ہاتھ میں بس وقت نہیں ہے

گر لوٹ کے آتے ہو تو رفتار بڑھاؤ

 

یوں بھی رہی اشعار میں تا عمر روانی

منہ زور رہا درد کے دریا کا بہاؤ

 

دل ہے کہ بھڑکنے کو سلگتا ہے ازل سے

سنتی ہو؟ ارے ہجر کی پر شور ہواؤ؟

 

وہ دور دمکتی ہوئی چنگاریاں کیا ہیں

جلتے ہوئے خیمے ہیں کہ روشن ہیں الاؤ؟

 

کیا خوب ہو گر ضبط مجھے پھونک دے ناصر

تم بھی جو مجھے ڈھونڈنے آؤ تو نہ پاؤ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ