اردوئے معلیٰ

ہے اِدھر اُدھر، ہے یہاں وہاں، دلِ منتشر تگ و تاز میں

ہے اِدھر اُدھر، ہے یہاں وہاں، دلِ منتشر تگ و تاز میں

سرِ بندگی تو جھکا دیا، مِرا دل نہیں ہے نماز میں

 

گہے محوِ دیدِ بتاں نظر، گہے صیدِ عشقِ بتاں ہے دل

ملے وہ حقیقتِ دل نشیں، کہاں اس طریقِ مجاز میں

 

اک اشارہ پا کے ہزاروں خم ترے مے کشوں نے لنڈھا دیے

وہ مزا ملا انہیں ساقیا، تری چشمِ بادہ نواز میں

 

تو ہے مثلِ نغمۂ جاں فزا، تو گزر دلوں سے فضا پہ چھا

نہ اسیرِ پردۂ ساز رہ، نہ سمٹ تو پردۂ ساز میں

 

یہ سکوں کی جنسِ گراں بہا، میں بتا نہ دوں تجھے ہے کہاں

ہے ثنائے ربِ جلیل میں، ہے دعائے قلبِ گداز میں

 

کہیں ٹوٹ جائے نہ آئینہ ،نہ تماشہ دل کا بنے نظرؔ

کہ ہزاروں فتنے مچل رہے ہیں نگاہِ فتنہ طراز میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ