اردوئے معلیٰ

ہے رحمتِ یزداں کا امیں گنبدِ خضریٰ

ہے رحمتِ یزداں کا امیں گنبدِ خضریٰ

سرکار کا وہ نورِمبیں گنبدِ خضریٰ

 

پُر کیف ہے دلکش ہے بہت اِس کا نظارہ

اَنگشتری دنیا ہے، نگیں گنبدِ خضریٰ

 

مِل جائے اگر اذن تو سرکار میں دیکھوں

پُر نُور وہ کعبہ وہ حسیں گنبدِ خضریٰ

 

ہے کتنا کرم مجھ پہ کہ جس سمت بھی دیکھوں

آتا ہے نظر مجھ کو وہیں گنبدِ خضریٰ

 

آصف کی تمنا ہے یہی اور دعا ہے

موت آئے تو ہو میرے قریں گنبدِ خضریٰ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ