ہے وردِ لساں صلِّ علیٰ اسمِ محمد

ہے وردِ لساں صلِّ علیٰ اسمِ محمد

ہر درد کی ہر دکھ کی دوا اسمِ محمد

 

عالم کی دو عالم کی ولا اسمِ محمد

ہر اک کے لئے راہِ ہدیٰ اسمِ محمد

 

وہ علمِ الٰہی کا ہوا ماہِ مکمّل

ہر راہِ عمل کی ہے صدا اسمِ محمد

 

حالی وہی ، عالی وہی ، حامی وہی ، داعی

ہر اک کے لئے مہر ہُوا اسمِ محمد

 

ہے محرمِ اسرار ، مددگار وہی ہے

ہر محوِ دعا کی ہے دعا اسمِ محمد

 

احساں ہے محمد کا ملا اسمِ الٰہی

اللہ کا احساں ہے ملا اسمِ محمد

 

سائل کا درود اور سرور اک ہی صدا ہے

ہے وردِ لساں صلِّ علیٰ اسمِ محمد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ