اردوئے معلیٰ

ہے پاک رُتبہ فکر سے اُس بے نیاز کا​

 

ہے پاک رُتبہ فکر سے اُس بے نیاز کا​

کچھ دخل عقل کا ہے نہ کام اِمتیاز کا​

 

شہ رگ سے کیوں وصال ہے آنکھوں سے کیوں حجاب​

کیا کام اس جگہ خردِ ہرزہ تاز کا​​

 

لب بند اور دل میں وہ جلوے بھرئے ہوئے​

اللہ رے جگر ترے آگاہ راز کا​​

 

غش آ گیا کلیم سے مشتاقِ دید کو​

جلوہ بھی بے نیاز ہے اُس بے نیاز کا​

 

ہر شے سے ہیں عیاں مرے صانع کی صنعتیں​

عالم سب آئینوں میں ہے آئینہ ساز کا​​

 

اَفلاک و ارض سب ترے فرماں پذیر ہیں​

حاکم ہے تو جہاں کے نشیب و فراز کا​

​ 

اس بے کسی میں دل کو مرے ٹیک لگ گئی​

شُہرہ سنا جو رحمتِ بے کس نواز کا​​

 

مانندِ شمع تیری طرف لَو لگی رہے​

دے لطف میری جان کو سوز و گداز کا​​

 

تو بے حساب بخش کہ ہیں بے شمار جرم​

دیتا ہوں واسطہ تجھے شاہِ حجاز کا​​

 

بندہ پہ تیرے نفسِ لعیں ہو گیا محیط​

اللہ کر علاج مری حرص و آز کا​​

 

کیوں کر نہ میرے کام بنیں غیب سے حسنؔ​

بندہ بھی ہوں تو کیسے بڑے کار ساز کا​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ