اردوئے معلیٰ

ہے کلامِ خدا ، کلامِ حضور

ہے کلامِ خدا ، کلامِ حضور

ماورائے گماں ، مقامِ حضور

 

جان لیوا تھے غم زمانے کے

دل دھڑکتا رہا بنامِ حضور

 

انبیا اُن کے مقتدی ٹھہرے

سب پہ لازم ہے احترامِ حضور

 

آبروئے سُخن ہے نعتِ رسول

اعتبارِ سُخن ہے نامِ حضور

 

جب بھی نامہرباں ہوئے حالات

آ گیا ہے زباں پہ نامِ حضور

 

مٹ گئیں ساری ظلمتیں اخترؔ

ایسے روشن ہوا پیامِ حضور

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ