اردوئے معلیٰ

Search

یاد میں ان کی جو گزرے زندگانی اور ہے

دین کے جو کام آئے وہ جوانی اور ہے

 

ہم کو ہے تسلیم عظمت آبِ زم زم کی مگر

انگلیوں سے ان کی جو نکلا وہ پانی اور ہے

 

ہے شبِ معراج کا یہ طُور سے اب تک خِطاب

لن ترانی اور لُطفِ من الراٰنی اور ہے

 

صرف اُن سے تُو سلامِ شوق کہنا اے صبا

جو دلِ مُضطر پہ گزری وہ کہانی اور ہے

 

ایک بار آقا کے روضے پر پہنچ جانے تو دو

اس دلِ بے تاب میں کُچھ ہم نے ٹھانی اور ہے

 

موت آئے جالیوں کے رو برو مجھ کو اگر

پھر ملے گی جو حیات جاودانی اور ہے

 

فاتحیں آئے بڑے اور حکمراں کتنے ہوئے

فاتحِ مکہ نے کی جو حکمرانی اور ہے

 

غیر کی وضع و تمدن پر فدا ہونا نہیں

اے غلامِ مصطفیٰ تیری نشانی اور ہے

 

سارے دیواں سب تخیُل سب کا اُسلُوب اِک طرف

اعلیٰ حضرت نے جو کی وہ مدح خوانی اور ہے

 

دُھوم آمد کی مچا کر آج مرزا قادری

نجد کے ایوان میں بجلی گرانی اور ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ