اردوئے معلیٰ

Search

یا رب بٹھا دے گنبدِ خضرا کی چھاؤں میں

مسند یہ مانگتا ہوں ہمیشہ دعاؤں میں

 

اک حاضری سے بڑھ گیا ہے شوقِ حاضری

میں بار بار پہنچوں حرم کی فضاؤں میں

 

آؤ چلیں حضور کا دربار دیکھنے

خوشبو بسی ہوئی ہے جہاں کی ہواؤں میں

 

شاہوں کو آرزو ہے جہاں پر گدائی کی

مجھ کو شمار کر لیں وہاں کے گداؤں میں

 

طیبہ مجھے دکھا دے مرا دل اُداس ہے

ہے کیف و انبساط اسی در کی چھاؤں میں

 

منزل میری مدینہ ہے روکو نہ راہ میں

پڑنے دو آبلے سے اُجاگرؔ کے پاؤں میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ