اردوئے معلیٰ

Search

یا محمد جو آپ کا نہ ہوا

واقفِ ذاتِ کبریا نہ وہا

 

درد بڑھتا رہا دوا نہ ہوا

عشق دل کا جو آئینہ نہ ہوا

 

ان کا احسان مان دشمن جاں

ہاتھ مصروفِ بد دعا نہ ہوا

 

کٹ گئے مرحلے سفر کے مگر

طے عقیدت کا مرحلہ نہ ہوا

 

عمر بھر نعتِ مصطفیٰ لکھی

قرضِ مدحت مگر ادا نہ ہوا

 

دیکھ کر مسجدِ نبی کا جلال

نعت لکھنے کا حوصلہ نہ ہوا

 

ہاں وہی حرف ٹھہرا بے وقعت

وقفِ تعریفِ مصطفیٰ نہ ہوا

 

حیف ہے اس کی بادشاہی پر

تیرے کوچے کا جو گدا نہ ہوا

 

عجز لفظوں کے منہ سے بول پڑا

نعتِ احمدِ کا حق ادا نہ ہوا

 

قافلہ میری فکر کا مظہرؔ

سوئے شہرِ نبی روانہ ہوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ