اردوئے معلیٰ

یا نبی جلوہ دکھا دیں دو گھڑی کے واسطے

یا نبی جلوہ دکھا دیں دو گھڑی کے واسطے

اس شرف کی ہے ضرورت زندگی کے واسطے

 

ہر ادا تیری حسیں، ہر وصف ہے تیرا جمیل

آئینہ سیرت ہے تیری آگہی کے واسطے

 

طاقِ دل میں ہے فروزاں عشقِ احمد کا چراغ

اور کیا مانگوں خدا سے روشنی کے واسطے

 

ظلم کے تاریک زنداں میں مقید تھی حیات

میرے آقا آئے امن و آشتی کے واسطے

 

ہو گئے دشمن ترے صدق و امانت کے گواہ

قابل صد رشک ہے یہ راستی کے واسطے

 

دفعتاً باب اثر نے لے لیا آغوش میں

جب دعاؤں میں کئے شامل نبی کے واسطے

 

دامنِ سرکار ہاتھوں میں رہے دائم صدف

یہ ضروری ہے نجاتِ اخروی کے واسطے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ