اردوئے معلیٰ

Search

یونہی نہیں بہ حجّتِ لولاک میں کہوں

منت پذیر اس کی ہے یہ بزمِ کاف و نوں

 

از چہرۂ صبیح، گریبانِ صبح چاک

رنگِ شفق ہے ماند زِ رخسارِ لالہ گوں

 

فی الذّات و فی الصّفاتِ خدا وہ نہیں شریک

مخلوقِ کائنات میں سب سے بڑا ہے یوں

 

پڑھتے رہیں جو مصحفِ قرآنِ مصطفیٰ

پائیں گے حکمتوں کے گہر ہائے گوناگوں

 

مال و منال و لعل و گہر سے کہاں نصیب

ذکرِ حبیبِ پاک سے ملتا ہے جو سکوں

 

اس پر گواہ ہو شبِ اسرا کی تیرگی

زیرِ قدم حضور کے افلاکِ بے ستوں

 

داتا ہیں، نکتہ سنج ہیں، روشن ضمیر ہیں

پہنچے جو اس کے عشق میں تا منزلِ جنوں

 

دربارِ مصطفیٰ کی جلالت مآبیاں

شاہانِ ذی حشم بھی وہاں پر ہیں سرنگوں

 

ہادی ہے سارے اہلِ جہاں کا وہی نظرؔ

بے امتیازِ خاک و وطن، نسل و رنگ و خوں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ