اردوئے معلیٰ

یوں تو ہر طور سے جینے کا کمال آتا ہے

پر ترے ساتھ نہ رہنے کا ملال آتا ہے

 

کام آنکھوں سے چلا سکتا ہوں لیکن مجھ کو

تیرے بکھرے ہوئے بالوں کا خیال آتا ہے

 

میں بھی چھپ چھپ کے کہیں اشک بہا دیتا ہوں

روز یوں ہی مری آنکھوں پہ زوال آتا ہے

 

میرے اشعار سناتی ہیں ہوائیں مجھ کو

شعر میرے وہ ہواؤں میں اچھال آتا ہے

 

ایک بے چین گھٹا آنکھ میں چھا جاتی ہے

جب اچانک ترے بارے میں سوال آتا ہے

 

رات دن بس یہی ترتیب لگی رہتی ہے

دوسرا غم مجھے پہلے سے، نکال آتا ہے

 

دور ہو کر اسے کچھ اور بھی محسوس کروں

زینؔ اُس شخص کو اک یہ بھی کمال آتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات