اردوئے معلیٰ

Search

یوں شان خدا نے ہے بڑھائی ترے در کی

جبریل بھی کرتا ہے گدائی ترے در کی

 

سُنتے ہیں بہت تختِ سلیمان کی شہرت

ہے عرش کے ہم پایہ چٹائی ترے در کی

 

ملتی ہے اسی در سے ہی عرفان کی دولت

رہ خوب ہمیں رب نے دکھائی ترے در کی

 

وہ روضۂ انوار، وہ گنبد کے نظارے

تصویر ہے آنکھوں میں سجائی ترے در کی

 

آتے ہیں ملائک بھی سلامی کو شب و روز

باری سے ملے جن کو رسائی ترے در کی

 

اے کاش کہ ہو جائے مدینہ مرا مسکن

بھاتی نہیں اب مجھ کو جدائی ترے در کی

 

چن چن کے جو لاتی ہوں میں الفاظ کے موتی

کرتا ہے قلم مدح سرائی ترے در کی

 

مل جائے اجازت کا شرف مجھ کو جو آقا

پلکوں سے کرے ناز صفائی ترے در کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ