اردوئے معلیٰ

Search

یوں نہ ہو میرا شبستان مقدر روشن

لکھنے بیٹھا ہوں میں توصیف شہنشاہ زمن

 

وہ شہنشاہ جہاں جس کے تبسم پہ نثار

لالہ و گل کی مہک ،سنبل و سوسن کی پھبن

 

مستند ہے فصحا کے لیے ہر قول اُس کا

گفتگو جس کی حکم، جس کا سخن مستحسن

 

ہے پنہ گاہ غریب الوطناں شہر اُس کا

اُس کا دربار ہے سب غم زدگاں کا مامن

 

برسا الطاف و عنایات کا جب ابر مطیر

نکہت و نور سے لبریز ہوئے برگ و سمن

 

دشمنوں پر بھی سحاب کرم اُس کا برسے

اُس کی رحمت ہے گنہگار پہ بھی سایہ فگن

 

اُس کے مہتاب کی کرنوں سے درخشاں ہو جہاں

ظلمت کفر کے وہ چاک کرے پیراہن

 

کر گئی ظلمت دنیا میں اجالا خالد

اُس کے خورشید جہاں تاب کی ایک ایک کرن

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ