اردوئے معلیٰ

یہاں کسی سے مزاجِ فغاں نہیں ملتا

یہاں کسی سے مزاجِ فغاں نہیں ملتا

زمیں ملے تو ملے آسماں نہیں ملتا

 

ہزار سعیِ مسلسل بقدرِ شوق سہی

مکاں تو ملتے رہے لامکاں نہیں ملتا

 

ہمیں کو حیف نہیں ذوقِ دید و شوقِ نظر

وہ کس جگہ نہیں ملتا کہاں نہیں ملتا

 

مذاقِ درد پسندیِ دل ملول نہ ہو

کمی ہے غم کی کہاں ، کہاں نہیں ملتا

 

فراق و وصل تو جذبِ طلب پہ ہے موقوف

قفس کی قید میں کب آشیاں نہیں ملتا

 

چراغِ دردِ محبت ! ذرا بڑھا دے لَو

کہ میری زیست کو میرا نشاں نہیں ملتا

 

ہمیشہ جس میں رہا ہو بہار کا موسم

مجھے تو ایسا کوئی گلستاں نہیں ملتا

 

وہ کیا ملے گا ؟ نہاں ہو جو لاکھ پردوں میں

کہ خود جلیؔ کو بھی اپنا نام و نشاں نہیں ملتا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ