اردوئے معلیٰ

Search

یہی مغفرت کا بہانہ ہوا ہے

کہ طیبہ میں اپنا ٹھکانہ ہوا ہے

 

مری خوش نصیبی کہ حاصل جہاں میں

مجھے پنج تن کا گھرانہ ہوا ہے

 

زمانے نے اُس کو بٹھایا ہے سر پر

جو تیری نظر کا نشانہ ہوا ہے

 

ترے در کو چھوڑا ہے جس نے بھی آقا !

تو وہ بُھولا بِسرا فسانہ ہوا ہے

 

ہیں خوشیاں مقدر کہ یادوں سے تیری

یہ جب سے مرا دوستانہ ہوا ہے

 

درودوں کا حلقہ سجایا جو گھر میں

تو گھر رحمتوں کا خزانہ ہوا ہے

 

نہیں کوئی غم اُن کے ہوتے، اگرچہ

’’عدو اپنا سارا زمانہ ہوا ہے‘‘

 

وہ طائف میں اعدا کے پتھر بھی کھا کر

رویہ ترا دلبرانہ ہوا ہے

 

بڑے خوش مقدر کبوتر ہیں جن کا

ترا آستاں ، آشیانہ ہوا ہے

 

مجھے باغِ جنت میں لایا مقدر

ادا پھر یہاں پر دوگانہ ہوا ہے

 

شہانِ جہاں کا بھی انداز ، آ کر

درِ نور پر فدویانہ ہوا ہے

 

سراپا ندامت ہوں ، آقا کرم ہو

تغافل بڑا مجرمانہ ہوا ہے

 

جلیلِ حزیں کو بلا لیں مدینے

مدینے کو دیکھے زمانہ ہوا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ