اردوئے معلیٰ

Search

یہ آواز آتی ہے بیتِ حرم سے

مری آبرو ہے محمد کے دم سے

 

سنور جائیں دنیا و دیں دونوں اس کے

نبی دیکھ لیں جس کو چشمِ کرم سے

 

جو سرکار کا دیکھا روئے مبارک

تو پھیرا ہے رخ پتھروں کے صنم سے

 

مدینے کے گلزار کی رنگ و بو میں

فضائیں تو آئی ہیں باغِ ارم سے

 

میں جب بیٹھتا ہوں فداؔ نعت لکھنے

تو موتی سے جھڑتے ہیں نوکِ قلم سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ