اردوئے معلیٰ

یہ آرزو ہے اُجالا ڈگر ڈگر پہ رہے

ترا چراغ کرم طاق ہر نظر پہ رہے

 

چلے جو قافلۂ شوق جانب طیبہ

غبار بن کے مرا دل بھی رہ گذر پہ رہے

 

خزاں کا دور نہ آئے کبھی گلستاں میں

بہار مدحت سرکار ہر شجر پہ رہے

 

فلک پہ مہر جہاں تاب ہو نہ ہو لیکن

نشانِ داغ غم مصطفیٰ جگر پہ رہے

 

کہیں بھی قوت پرواز دے سکے نہ جواب

جو دھول شہر مدینہ کی بال و پر پہ رہے

 

ہمیشہ بارش رحمت سے تر رہیں در و بام

ہمیشہ محفل میلاد میرے گھر پہ رہے

 

بضد ہے وقت مٹانے پہ ہر نشاں یاورؔ

خدا کرے نظر ان کی مرے کھنڈر پہ رہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات