یہ آ گیا مجھے تیرا خیال ویسے ہی

یہ آ گیا مجھے تیرا خیال ویسے ہی

غزل کا ہونا ہواہے کمال ویسے ہی

 

ہمارے حسنِ نظر کا کمال کچھ بھی نہیں ؟

تو کیا ترا ہے یہ حسن و جمال ویسے ہی؟

 

ترا وصال کہ جس طور میرے بس میں نہیں

ہوا ہے ہجر میں جینا محال ویسے ہی

 

ترا جواب مرے کام کا نہیں ہے اب

کہ میں تو بھول چکا ہوں سوال ویسے ہی

 

کہا یہ کس نے کہ اکتا گیا جنوں سے میں

پڑا ہوں دشت میں اب تو نڈھال ویسے ہی

 

اُچھالتا ہے جزیروں کو جس طرح اے بحر

مری بھی لاش کو تہہ سے اچھال ویسے ہی

 

نکالتاہے تو جس طور رات سے سورج

ہماری شب سے ہمیں بھی نکال ویسے ہی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں دن ہوں ، ڈھونڈتا رہتا ہوں شام تک اس کو
ہمیں شعور جنوں ہے کہ جس چمن میں رہے
چاہے آباد ہوں، چاہے برباد ہوں، ہم کریں گے دعائیں تمھارے لئے
کوئی نہیں ھے یہاں جیسا خُوبرُو تُو ھے
مِرا تماشہ ہوا بس تماش بینو! اُٹھو
یہ میرا دل ہے کہ خالی پڑا مکاں کوئی ہے؟
کتنے چراغ جل اٹھے، کتنے سراغ مل گئے
دُھوپ میں جیسے پھول ستارہ لگتا ہے
خواب کدھر چلا گیا ؟ یاد کہاں سما گئی ؟
عمر بس اعداد کی گنتی سے بڑھ کر کچھ نہیں