اردوئے معلیٰ

یہ تیری نعت کا منظر کہاں کہاں چمکا

ترا کرم ، مرے حرفوں کے درمیاں چمکا

 

یہ تیرا حرفِ ترنم کہ رتجگے مہکے

یہ تیرا اذنِ تکلّم کہ بے زباں چمکا

 

سنبھال رکھا تھا دل کو بہ طرزِ طوقِ جتن

اشارہ ملتے ہی یہ تو کشاں کشاں چمکا

 

وہ آفتابِ نبوت ، وہ وجۂ کون و مکاں

حرا کی کوکھ سے اُبھرا تو کُل جہاں چمکا

 

لبوں نے بوسے کے منظر میں پھر سنبھال لیا

وہ اسمِ پاک جو لفظوں کے درمیاں چمکا

 

عجیب لمحۂ معراج تھا ، ورائے گماں

عجیب شب تھی کہ سورج پسِ نہاں چمکا

 

تمھاری خَلق تھی آغازِ خلقِ نور و وجود

تمھارے نور کے مابعد خاکداں چمکا

 

وہ میرے حرفوں میں آنے سے بیشتر مقصودؔ

یقیں کے نور میں مہکا ، پسِ گماں چمکا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات