یہ خطِ حسن ہے لوحِ جہاں پہ تیرا نام

یہ خطِ حسن ہے لوحِ جہاں پہ تیرا نام

سبک ہواؤں پہ موجِ رواں پہ تیرا نام

 

بشکل خوشبو فضاؤں کی جاں پہ تیرا نام

بہار بن کے ملا گلستاں پہ تیرا نام

 

شفق کی سرخی میں تیری نشانیاں پنہاں

لکھا ہوا ہے رخِ کہکشاں پہ تیرا نام

 

گلوں کی خندہ لبی میں ترے وجود کا عکس

حیات چھیننے والی خزاں پہ تیرا نام

 

ہے امتحانِ جگر گوشۂ رسول کریم

ہے کربلا کی دکھی داستاں پہ تیرا نام

 

بتا گیا ہے مجھے عشقِ سرمد و منصور

مچل رہا تھا لبِ عاشقاں پہ تیرا نام

 

ہزاروں نعمتیں بخشی ہیں تو نے اے مولا

متینؔ کیسے نہ لائے زباں پہ تیرا نام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ