اردوئے معلیٰ

یہ درگاہِ معالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

یہاں کی رُت جمالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

مچل لیں روضۂ جنت میں آنکھیں اور حرفِ لب

یہاں سے آگے جالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

الگ انداز ہے زائر کی حیرت کا ، عقیدت کا

عجب تیرا سوالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

کوئی امکان بنتا ہی نہیں مدحت سرائی کا

سو یہ اِک لَے بنا لی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

خیالِ خام لرزاں ہے بہ پیشِ مدعائے دل

بیانِ شوق خالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

نفَس گُم ، جذب عاجز ، لفظِ مدحِ اوج ناگفتہ

فقط دل لااُبالی ہے ،، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

عجب یہ بے زبانی بھی زباں دارِ تکلم ہے

مرا مشرب بلالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

تصور میں اُتاری ہیں ترے احساس کی کرنیں

شبِ فرقت اُجالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

کھڑے ہیں روبرو شاہانِ نُطق و حرف دَم بستہ

کمالِ خوش مقالی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

 

اجابت چومتی ہے لہجۂ عرضِ تمنا کو

مدینے سے دُعا لی ہے ، نگاہیں خَم ، مژہ پُر نَم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات