اردوئے معلیٰ

یہ زمیں ، یہ آسماں ، سب رائگاں

نذرِ محمد علی منظر

یہ زمیں ، یہ آسماں ، سب رائگاں

دیکھ لے سارا جہاں ، سب رائگاں

 

کیا سنائیں داستانِ رنگ و نور

مور ، جگنو ، تتلیاں ، سب رائگاں

 

واہمہ ہے یہ جہانِ ہست و بود

ہے عدم ہی جاوداں ، سب رائگاں

 

کہکشاں بر کہکشاں یہ کائنات

ہے جہاں اندر جہاں ، سب رائگاں

 

دید کی لذت کے لمحے عارضی

پھر کہاں تُو ، میں کہاں ، سب رائگاں

 

ہجر کے سارے الم ہیں رفتنی

وصل کی شادابیاں ، سب رائگاں

 

ساری باتیں اور ملاقاتیں عبث

دل سے اٹھتا ہے دھواں ، سب رائگاں

 

رفتگاں ، موجودگاں ، آئندگاں

رائگاں ، سب رائگاں ، سب رائگاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ