اردوئے معلیٰ

یہ زمیں تیری ، آسمان ترا

یہ زمیں تیری ، آسمان ترا

اور اس کے جو درمیان ترا

 

یہ زمان و مکان تیرے ہیں

یہ جہاں تیرا ، وہ جہان ترا

 

ثبت ہر قرن ، ہر زمانے پر

تجھ سے پہلے بھی تھا نشان ترا

 

ہم طلب گار تیری رحمت کے

ہم پہ چھت تیری ، سائبان ترا

 

سارے مشغول ہیں گدائی میں

سنگِ در تیرا ، آستان ترا

 

میں گنہ گار لاکھ ہوں اشعرؔ

پر یہ دل میرا ہے مکان ترا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ