اردوئے معلیٰ

Search

یہ طبیعت مجھے اپنا نہیں بننے دیتی

جیسے سب ہیں مجھے ویسا نہیں بننے دیتی

 

آنکھ ایسی ہے کہ دیکھے نہیں جاتے حالات

سوچ ایسی ہے کہ اندھا نہیں بننے دیتی

 

دُور اندر سے کہیں ایک اُبھرتی ہوئی چیخ

میرے احساس کو بہرا نہیں بننے دیتی

 

ظلم ایسا ہے کہ دنیا کی زبانیں خاموش

یہ خموشی مجھے گونگا نہیں بننے دیتی

 

دلِ وحشی مجھے ہونے نہیں دیتا سرسبز

چشم گریہ ہے کہ صحرا نہیں بننے دیتی

 

دشت ایسا ہے کہ چھتنار شجر ہیں ہر گام

دھوپ ایسی ہے کہ سایا نہیں بننے دیتی

 

خاک ایسی ہے کہ ہر ذرہ طلبگار نمو

رُت وہ ظالم کہ شگوفہ نہیں بننے دیتی

 

شہر ایسا ہے کہ تا حدِ نظر امکانات

بھیڑ ایسی ہے کہ رستہ نہیں بننے دیتی

 

حرمتِ خامہ وہ ضدی جو کسی قیمت پر

سکۂ حرف کو پیسہ نہیں بننے دیتی

 

کیا قیامت ہے کہ اب میرے تصور کی تھکن

بادلوں میں کوئی چہرہ نہیں بننے دیتی

 

میں کسی اور کا بنتا تو منافق ہوتا

یہ انا مجھ کو کسی کا نہیں بننے دیتی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ