یہ غم نہیں کہ وہ مجھ سے وفا نہیں کرتا

یہ غم نہیں کہ وہ مجھ سے وفا نہیں کرتا

ستم تو یہ ھے کہ کہتا ھے ‘جا ، نہیں کرتا

 

طلوعِ عارض و لب تک مَیں صبر کرتا ھوں

سو منہ اندھیرے غزل اِبتدا نہیں کرتا

 

یہ شہر ایسے حریصوں کا شہر ھے کہ یہاں

فقیر بھیک لیے بِن دُعا نہیں کرتا

 

زباں کا تلخ ھے لیکن وہ دل کا اچھا ھے

سو اُس کی بات پہ مَیں دِل بُرا نہیں کرتا

 

سوال  عشق پہ لمبی کہانیاں نہ سنا

مجھے بتا کہ تو کرتا ہے یا نہیں کرتا ؟

 

بس ایک مصرعہؑ تر کی تلاش ھے مجھ کو

میں سعیؑ چشمہؑ آبِ بقا نہیں کرتا

 

شہیدِ عشق کی سرشاریاں مُلاحظہ ھوں

گلا کٹا کے بھی خُوش ھے ، گِلہ نہیں کرتا

 

مجھے قبول نہیں خیر و شر کی یہ پہچان

کہ وہ بُرا ہے جو میرا بھلا نہیں کرتا

 

دِل ایسا پھُول ھے فارس کہ جو مہکنے کو

کبھی بھی منتِ بادِ صبا نہیں کرتا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ