یہ فضلِ خاصِ خدا ہے ز فضلِ لا محدود

یہ فضلِ خاصِ خدا ہے ز فضلِ لا محدود

ہوں نغمہ سنجِ نبی خدائے پاک و ودود

 

ہزار گل ہیں دل آرا بہ گلستانِ وجود

محمدِ عربی ہے مگر گلِ مقصود

 

یہ مرتبہ ہے یہ ہے شانِ ہستی مسعود

جہاں ہو ذکر فرشتے وہیں ہوں آ موجود

 

بلند نام ہے گردوں وقار ہے لاریب

ہے اس کے پاؤں کے نیچے فرازِ چرخِ کبود

 

زمیں سے، عرش سے، افلاک سے زہے رتبہ

پہونچ رہا ہے اسے تحفۂ سلام و درود

 

انہیں کے مورثِ اعلیٰ کا چشمۂ زمزم

انہیں کے جد کو گلزار آتشِ نمرود

 

تمام را توں میں افضل تریں مرے نزدیک

وہ ایک رات کے یک جا تھے بندہ و معبود

 

مرے نبی کو ملی ہے شفاعتِ کبریٰ

انہیں کے واسطے مختص ہے منزلِ محمود

 

نزولِ مصحفِ قرآں کے بعد دنیا کو

نہ ہے زبور کی حاجت نہ حاجتِ تلمود

 

خدا کے دین کی تبلیغ سے نہ باز آئے

اگر چہ جسمِ مبارک ہوا بھی خوں آلود

 

چلیں نہ نقشِ کفِ پائے مصطفیٰ پہ اگر

حصولِ خلد کے رستے تمام ہوں مسدود

 

رواں دواں ہے ہر اک قافلہ اسی جانب

ہے جلوہ گاہِ نبی سب کی منزلِ مقصود

 

میں جاؤں صدقے ترے اے صبائے خوش رفتار

حضورِ قدس میں لے جا مرا سلام و درود

 

چھٹے نہ دامنِ آقا تمھارے ہاتھوں سے

نظرؔ یہی تو بس اک ہے وسیلۂ بہبود

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ