اردوئے معلیٰ

یہ کرب تنہائی اور یہ انتظار وحی مبیں کی کیفیت مسلسل

یہ کرب تنہائی اور یہ انتظار وحی مبیں کی کیفیت مسلسل
نبی مرسل کی ذات عالی مقام کے حزن و غم کا محور بنی ہوئی تھی
یہی شب و روز تھے
انہی مشکلات کا عالم گراں بار تھا
کہ اک روز سورہ والضحیٰ کے پیرایۂ حسیں میں
جناب جبریل لے کر آئے پیام الفت
نبی رحمت کے واسطے تھا یہ
نفرتوں کے مہیب جنگل میں جام الفت
حضور عالی مقام اپنی زبان اقدس سے
کس مسرت سے پڑھ رہے تھے کلام الفت
’’چمکتے دن کی قسم ہے
اور رات کی کہ جب وہ قرار پکڑے
کہ تیرے رب نے نہ تجھ کو چھوڑا، نہ تجھ سے بیزار ہی ہوا ہے
اور آخرت ہے ترے لیے اس جہاں سے بہتر
کہ تیرا پروردگار تجھ کو ضرور اتنا عطا کرے گا
ہو جس سے تجھ کو خوشی میسر
کہ ہم نے تجھ کو یتیم پا کر پناہ دی
اور بے خبر پا کے راستے کا پتہ بتایا
تجھے کثیر العیال اور تنگ دست پایا
تو ( اپنے فضل و کرم سے)تجھ کو غنی بنایا
سو، تو بھی (ہرگز) یتیم کے ساتھ (اب) نہ سختی سے پیش آنا
(کسی) سوالی کو مت جھڑکنا
اور اپنے پروردگار کی نعمتوں کا بھی ذکر کرتے رہنا’’
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ