اردوئے معلیٰ

Search

خدایا مصطفٰی سے تو ملا دینا حقیقت میں

غمِ فرقت مرے دل سے مٹا دینا حقیقت میں

 

جدائی کو میں سہ سہ کر نہ مر جاؤں کبھی مولا

مرے دل کے سبھی دکھڑے گھٹا دینا حقیقت میں

 

سلیقہ دے کوئی ایسا چلا جاؤں مدینے میں

لگا کر پر مدینے تک اڑا دینا حقیقت میں

 

معنبر جو ہوائیں تھیں کبھی فیضِ رسالت سے

مجھے اُس دور کی عنبر فضا دینا حقیقت میں

 

تمنا ہے مری یا رب کبھی جاؤں مدینے میں

کبھی تو سامنے خضرٰی بھی لا دینا حقیقت میں

 

خدایا مجھ کو راس آئیں بہاریں اُس زمانے کی

نبی کے ان غلاموں میں بٹھا دینا حقیقت میں

 

نبی کی پشت پر ابنِ علی جس شان سے بیٹھے

وہی منظر مجھے یا رب دکھا دینا حقیقت میں

 

ولی ہوتا انہیں تکتا کہاں بس میں ہے یہ قائم

سُلا کر مجھ کو خوابوں سے جگا دینا حقیقت میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ