اردوئے معلیٰ

Search

 

طیبہ نگر کا مجھ کو بھی زادِ سفر ملے

گر میری آزوؤں کو بابِ اثر ملے

 

کیسے نہ پہنچے منزل رفعت پہ وہ حُروف

جن کو، زبان صاحب شق القمر ملے

 

مفہومِ زندگی نئے سانچوں میں ڈھل گیا

جب ساکنانِ فرش کو خیرالبشر ملے

 

دامانِ شہر علم سے جو منسلک نہیں

ممکن نہیں وہ عاقل وبالغ نظر ملے

 

توصیفِ مصطفیٰ لکھوں حسّان کی طرح

اے کاش، مجھ کو، ان سا شعور وہنر ملے

 

قلب ونظر پہ چھا گیا دربارِ مصطفیٰ

ہے جستجوئے شوق کہ طیبہ میں گھر ملے

 

قبل از دعا بھی، بعدِ دعا بھی پڑھو درود

گر چاہتے ہو شاخِ دُعا کو ثمر ملے

 

خاکِ مدینہ اُوڑھ کے سو جاؤں میں نثار

سلطان انبیاء سے اجازت اگر ملے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ