اردوئے معلیٰ

Search

محبت کو قلم میں ڈال کر حرفِ ثنا لکھ دے

مہک جائے قلم تیرا اگر خیرالورٰی لکھ دے

 

اٹھایا آپ کا کرتہ لیا بوسہ سوالی نے

تو اُس کی اِس گزارش کو مودت کی ادا لکھ دے

 

لِٹایا گرم دھرتی پر پگھلتی تن کی چربی تھی

محمد کے غلاموں کا یہی رنگِ وفا لکھ دے

 

مرے آقا کی یادوں میں جو آنکھوں سے ہوئے جاری

رواں اشکوں کی مالا کو تو رحمت کی گھٹا لکھ دے

 

حسیں نقشِ کفِ پا تھے عرب کے ریگزاروں پر

اجازت چومنے کی اک گھڑی میرے خدا لکھ دے

 

میں بیمارِ محمد ہوں مجھے آقا سے ملنا ہے

ملا کر تو مجھے یا رب! مرے حق میں شفا لکھ دے

 

زباں پر تھا احد جس کے وہ اک حبشی مجاہد تھا

مری قسمت میں اُس جیسا تو اک حرفِ ضیا لکھ دے

 

کبھی حسنین کے صدقے تو قائم کی حزیں آنکھوں

کی بے نوری میں حوروں سی طلسماتی حیا لکھ دے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ