اردوئے معلیٰ

Search

میری سانسوں میں روانی مصطفٰی کے دم سے ہے

اب مرے شیطاں کو نسبت رنج سے ہے غم سے ہے

 

سارے عالم کی بہاریں اس کی قسمت پر فدا

جس کسی کا بھی تعلق جانِ دو عالم سے ہے

 

ایک آنسو عشقِ جاناں کی نمائش کر گیا

صرف مجھ کو یہ شکایت اپنی چشمِ نم سے ہے

 

پھول چہرہ گریہِ شب بے سبب کرتا نہیں

سردئ آتش کو نسبت قطرہِ شبنم سے ہے

 

ہم خیالِ یار پر ہی مر مٹیں تو کیا عجب

اور تم کو کیا توقع بد نصیبو ہم سے ہے

 

کیوں نہیں ہے اے تبسم تجھ کو بخشش کا یقیں

تیری نسبت خالقِ کونین کے محرم سے ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ