اردوئے معلیٰ

Search

جہان بھر میں نمایاں ہے اِک نظارۂ خیر

وہ عالمین کی رحمت کا استعارۂ خیر

 

بکھر ہی جانا تھا وحشت کے شر سمندر میں

نظر میں رہتا ہے میرے مگر کنارۂ خیر

 

مثالِ گنبدِ خضریٰ نہیں بجز اِس کے

زمینِ نور پہ رکھا ہے شاہ پارۂ خیر

 

قصورِ قیصر و کسریٰ دہل گئے جس سے

عرب کی وادی میں گونجا وہ ایک نعرۂ خیر

 

نئے معانی میں ڈھلتے گئے وہ عِلم و قلَم

حرا سے لے کے وہ آیا عجیب پارۂ خیر

 

زمیں پہ آیا تو جیسے ہوئی سحر بیدار

فلک پہ صدیوں سے روشن تھا اِک ستارۂ خیر

 

تمھاری نعت کے مابعد کچھ نہیں سوجھا

کچھ ایسے کھینچا ہے جذبوں نے گوشوارۂ خیر

 

بہ فیضِ نعتِ نبی سرخرو ہوں مَیں مقصودؔ

مِلا ہوا ہے ازل سے مجھے اشارۂ خیر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ