اردوئے معلیٰ

Search

اذن جن کو ملا شفاعت کا

میرے آقا کی ذات ٹھہری ہے

 

شبِ اسریٰ کہا یہ خالق نے

آؤ محبوب رات ٹھہری ہے

 

رب نے وعدہ کیا ہے بخشش کا

اور شفاعت پہ بات ٹھہری ہے

 

اس جہاں میں حضور کی آمد

مقصدِ کائنات ٹھہری ہے

 

وارثیؔ زندگی کا مقصد اب

صرف آقا کی نعت ٹھہری ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ