اردوئے معلیٰ

آرام گہِ سید سادات یہ گنبد

 

آرام گہِ سید سادات یہ گنبد

یہ فخر زمیں، تاج سماوات، یہ گنبد

 

ہے اس کی عطا قبلہ نمائی مرے دل کی

آئینہ حق، زد طلسمات، یہ گنبد

 

تابندہ ہیں اس پر تو سر سبز سے راہیں

ہے بڑھ کے مہ و مہر سے دن رات یہ گنبد

 

کھلتے ہیں یہاں آن کے امکاں دل و جاں کے

تریاق سم دہر و غم ذات یہ گنبد

 

خورشید کو رکھتا ہے تہِ گنبد گرداں

آزاد غم گردش حالات یہ گنبد

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ