اردوئے معلیٰ

Search

تارِ شب سے زماں کوخلاصی ملی

اور بہاروں پہ پھر سے بہار آگئی

جوق در جوق قدسی

سرِ فرش تب

سبز پرچم اُٹھائے اُترنے لگے

ڈالی ڈالی پہ غنچے مہکنے لگے

اور فرشِ جہاں

یوں لگا

جیسے خوشبو سے بھر سا گیا

اور بہاروں پہ پھر سے بہار آگئی

اُن کے قدموں کا دھوون تھا حسنِ جناں

نظمِ عالم ہوا

اُن کے دم سے رواں

سر بہ خم چاند تھا

اُن کی دہلیز پر

ماہتاب و ستارے نگوں سار تھے

حسنِ کل کی جھلک کے طلبگار تھے

حسن کے عطر کے

سب حوالے رسولِ خدا کے حضور

جذب و مستی میں خوشیوں سے سرشار تھے

رنگ کی نور کی ایک برسات تھی

جس سے بصرٰی کی بستی بھی روشن ہوئی

لگ رہا تھا یوں جیسے کہ بادِ صبا

کہہ رہی ہو گلابوں کے کانوں میں کچھ

دشتِ بطحا میں عبد المطلب کے گھر

آمنہ، ابنِ شیبہ کے نورِ نظر

نور والے محمد کی آمد ہوئی

نور ہی نور تھا

چار سو نور تھا

تابہ حدِّ نگہ

نور ہی نور تھا

ضبطِ تحریر سے ہے وہ منظر ورا

کس قدر تھا حسیں

چہرۂ والضحٰی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ