اردوئے معلیٰ

آمنہ بی کا پسر، راج کنور، لختِ جگر

ہے شہنشاہِ زمن، ختمِ رسل، فخرِ بشر

 

چاک رکھے شبِ یلدا کا جگر تا بہ سحر

بزمِ عالم میں سجی ایسی کہاں شمعِ دِگر

 

دوپہر، چار پہر، بلکہ ہے سچ آٹھ پہر

ہر جگہ صلِّ علیٰ تذکرۂ خیرِ بشر

 

رزم گاہِ حق و باطل میں وہ ہے شیرِ ببر

ایک آئے نہ مقابل جو چلے تیغِ دو سر

 

ڈال دیں ان کی شریعت کو پسِ پشت اگر

نظمِ دیں، نظمِ جہاں، پل میں ہوں سب زیر و زبر

 

شافعِ روزِ جزا، بندۂ محبوبِ خدا

ان کے حق میں تو یہ کہہ سکتے ہیں بے خوف و خطر

 

ایک ہی جملہ اگر شرطِ ثنا ہو تو کہوں

مبتدا سرورِ کونین، ہے کونین خبر

 

مصحفِ آخرِ حق آپ پہ نازل جو ہوا

اس کی ہر سطر ہے اک معدنِ رخشندہ گہر

 

ان کے قرآں کے لیے تیشۂ تحریف نہیں

رہے محفوظ بہر پیش و سکوں، زیر و زبر

 

جو نہ بیٹھا کبھی در سایۂ قرآنِ حکیم

زندگی بھر وہ رہا نابلَدِ علم و خبر

 

مستِ صہبائے حقیقت ہو وہ لاریب و گماں

ڈال دے جس پہ وہ ساقی نگہِ کیف اثر

 

میں بھی میکش ہوں ترا ساقی گلفام ذرا

"​چشمِ رحمت بکشا سوئے من انداز نظر”​

 

لا وَزَر پڑ ھ کے بہت رَعشہ بر اندام تھا میں

مل گئی ایسے میں دامن میں ترے جائے مفر

 

مرتبت اس کی بیاں کیا ہو نظرؔ جس کے لیے

آسماں راہ گزر، کاہکشاں گردِ سفر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات