اردوئے معلیٰ

آنگن آنگن شمعِ خیالِ یار جلے

 

آنگن آنگن شمعِ خیالِ یار جلے

رات آئی اور لوگ ستارہ وار جلے

 

اس بستی کی رات بھی کتنی روشن ہے

بجھ جائیں گر دیپ تو پہرے دار جلے

 

دن بھر گہرا سناٹا رہتا ہے مگر

شب بھر ایک چراغ پسِ دیوار جلے

 

کشتی سے یہ کس کا عکس اتر آیا

ماہی گیر کے ہاتھوں میں پتوار جلے

 

میں تنہا ہر پیڑ سے مل کر روؤں جمال

چاند اکیلا دریا کے اُس پار جلے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ