آ وڑیا ترے شہر مدینے اک غمگین سوالی ھُو

آ وڑیا ترے شہر مدینے اک غمگین سوالی ھُو

کملی والیا لج پالا، کرِیں نال اُسدے لج پالی ھُو

 

رو رو عرض گزارے شاہا پکڑ سُنہری جالی ھُو

ایہہ مانگت نہیں ٹلن والا، کاسے پا خوش حالی ھُو

 

واسطہ پاوے زہراؓ دا، کرِیں لُگیاں دی رکھوالی ھُو

حسنؓ حسینؓ دا سِر صدقہ آج بھر دے بھانڈا خالی ھُو

 

فقر ابوذرؓ والا بخشیں ، دیویں سوز بلالی ھُو

تیری شان خدایُوں اُچّی ، تیرا حُسن مثالی ھُو

 

سِر تے تاج شفاعت والا ، موہڈے کملی کالی ھُو

کیوں نصیر نہ میں کھٹکانواں اُس دا بابِ عالی ھُو

 

جس نوں سب توفیقاں ربّوں ، جو اُمّت دا والی ھُو

جھولیاں بھر بھر لوکی جاندے میں کیوں جانواں خالی ھُو

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں درِ مصطفیؐ پہ جاتا ہوں
حبیبِ کبریاؐ ہیں، بالیقیں ہیں، محمدؐ رحمۃ اللعالمیں ہیں
نُطق کا ناز بنے، کیف سے معمور ہُوئے
پاتے ہیں وہی رحمتِ سلطانِ مدینہ
خامۂ حرف بار چُپ ، لہجۂ گُل بہار چُپ
زندگی اُس کی بصد رنگِ دگر رہتی ہے
امکانِ حرف و صوت کو حیرت میں باندھ کر
بس ایک نعت کہی بے زبان سانسوں نے
ہے کلامِ خدا ، کلامِ حضور
محبوب کردگار کی رفعت تو دیکھئے

اشتہارات