اردوئے معلیٰ

Search

اب اور نہ تڑپاؤ مدینے کی ہواؤ

مجھ کو بھی لیے جاؤ مدینے کی ہواؤ

 

پیغامِ حضوری کو ترستا ہوں میں کب سے

کچھ کان میں کہہ جاؤ مدینے کی ہواؤ

 

آقا ہیں جہاں میرے وہ دربار ہے کیسا

کچھ تو مجھے بتلاؤ مدینے کی ہواؤ

 

سینے میں بہت آج تڑپتا ہے مرا دل

ایسے میں چلی آؤ مدینے کی ہواؤ

 

خوشبو کے کچھ آثار نہیں ہیں مرے گھر میں

ہاں ہاں ذرا مہکاؤ مدینے کی ہواؤ

 

کچھ تو دل مضطر کو سکوں آئے میسر

اک لمحہ ٹھہر جاؤ مدینے کی ہواؤ

 

جو حال ہے سرورؔ کا بھلا تم سے کہیں کیا

ہاں تم ہی ترس کھاؤ مدینے کی ہواؤ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ