اب پردہ پردہ پردہِ سازِ جمال ہے

 

حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی تشریف آوری کے بعد

 

اب پردہ پردہ پردہِ سازِ جمال ہے

اب بادہ بادہ بادہِ عرفانِ حال ہے

 

اب جرعہ جرعہ جرعہِ جامِ الست ہے

اب ذرہ ذرہ ذرہِ خورشیدِ مست ہے

 

اب قطرہ قطرہ قطرہِ اشکِ نیاز ہے

اب توبہ توبہ توبہِ سوز و گداز ہے

 

اب غنچہ غنچہ ۔۔۔غنچہِ زلفِ نگار ہے

اب لالہ لالہ لالہِ رخسارِ یار ہے

 

اب جلوہ جلوہ جلوہِ سرو سمن ہوا

اب خندہ خندہ خندہِ صبحِ چمن ہوا

 

اب نعرہ نعرہ نعرہِ توحید بن گیا

اب سجدہ سجدہ سجدہِ امید بن گیا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

دیارِ احمد مختار چل کے دیکھتے ہیں
تمہارا نام مصیبت میں جب لیا ہو گا
ترا ظہور ہوا چشمِ نور کی رونق
سحر چمکی جمالِ فصلِ گل آرائشوں پر ہے
در پہ آئے ہیں اِلتجا کے لیے
اُنؐ کی رحمت کا کچھ شمار نہیں
درِ سرکارؐ پر گریاں ہے کوئی آبدیدہ ہے
السّلام اے سیّد و سردارِ ما
آپ ہیں مصطفےٰ خاتم الانبیاء
وَالفَجر ترا چہرہ، والیل ترے گیسو

اشتہارات