اردوئے معلیٰ

Search

اجالوں کا جہانِ بیکراں یہ پیر کا دن ہے

بہاروں میں بہارِ جاوداں یہ پیر کا دن ہے

 

درودوں کی سلاموں کی صدائیں ہی صدائیں ہیں

عجب آمد نشاں، حیرت سماں یہ پیر کا دن ہے

 

ابھی تک راستے گلیاں فضائیں سب مہکتی ہیں

تری نسبت سے ہی عنبر فشاں یہ پیر کا دن ہے

 

ابھی تک روشنی ہی روشنی ہے بزمِ امکاں میں

ابھی تک روزِ روشن کا بیاں یہ پیر کا دن ہے

 

ترا خورشید کیا نکلا کہ ظلمت ہو گئی رخصت

اجالوں کا نقیبِ بے گماں یہ پیر کا دن ہے

 

پسِ تسبیحِ کُلّ شئ ہر اک ذرّہ ثنا خواں تھا

ظہورِ مصدرِ نطق و بیاں یہ پیر کا دن ہے

 

زمیں سے آسماں تک نور تھا رونق ہی رونق تھی

اسی جشنِ مسرّت کا نشاں یہ پیر کا دن ہے

 

خدا کے بعد زیبا ہے تجھے زیبائی یکتائی

یہی اثنَین کی رمزِ نہاں یہ پیر کا دن ہے

 

کہی ہے نعت نوری نے بہ پاسِ خاطرِ مقصود

یقیناً نعت کا یومِ جہاں یہ پیر کا دن ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ