اجے دی اوہ پیاں دِسدیاں سانوں ماہی والیاں ٹاہلیاں

اجے دی اوہ پیاں دِسدیاں سانوں ماہی والیاں ٹاہلیاں

نال خوشیاں دے رَل مِل جتھے راتاں کالیاں جالیاں

 

اُرّے تھیں اوہ اُریرے ہے پریرے پرّے تھیں

بے شک آپے آپ ہے اساں سبھے جھوکاں بھالیاں

 

رات وِچ دینہوں ویکھ سمجھے کُلُّ شئیً ھالکٌ

کُجھ نہ وِچ سب کُجھ ہے ڈِٹھرا ایہہ بے رنگی چالیاں

 

جے آکھاں تُوں دسدا ناہیں تیرے بن پھر کون ہے؟

رُوپ کس دا میں دساں دینویں جے توں ای وکھالیاں

 

ہے جو تنزیہہ عین تشبیہہ جمع حق مشہود ہے

کرم کیتا غوث الاعظم اپنے سردیاں والیاں

 

پا کے گَل وَل پیچیاں زُلفاں دی میں روتی وتاں

ساوی پیلی ہورہیاں، گیّاں سُرخیاں تے لالیاں

 

رہندیاں پل پل سِکاں دَم دَم اُڈیکاں تیریاں

کَنڈ ولا کے ٹُر گیوں سجناں پریتاں نہ پالیاں

 

جھات پا کے وَل گیوں ساری رَین گُزری روندیاں

نین برسن زارِ رِم جِھم جیویں بدلیاں کالیاں

 

فِی الْمَنَامِ قَدْ تَفَضَّلْتَ عَلَیّ مُنْیَتیِ

اَرِنیِ فَضَلاً جَمالَکَ فَاَرِحْنیِ فِی الْعَیِاںْ

 

دِل دا وہڑا خانہ اکھّیاں دا دوہاں نُوں انتظار

قدم پاویں جیوندیاں جیوندیاں تد ہوون خوشخالیاں

 

ویکھ لو رَج کے اکھیّو کُجھ وساہ نہیں دم دا

پھر بھی پیّاں ویکھسن کوئی خوش نصیباں والیاں

 

مہر ہے ساری علیؓ دی شک نہ رہیا اِک ذرّہ

تاہیں اوہ پیاں دسدیاں سانوں ماہی والیاں ٹاہلیاں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

حسرت سے کھُلے گا نہ حکایت سے کھُلے گا
قربان مقدر پہ ترے وادیٔ ایمن
اذنِ ثنا ہُوا ہے نگہدارِ حرف سے
جب اپنے نامۂ اعمال پر مجھ کو ندامت ہو
بختِ خفتہ کے سبھی جڑ سے ہی کٹ جائیں درخت
جمال و حسن کا طُغریٰ ہے آپ کی چوکھٹ
تو روحِ کائنات ہے تو حسن کائنات
زندگی ملی حضور سے
عشقِ احمد سے قرینہ آ گیا
انجامِ التجا، شبِ غم کی سحر پہ ہو