اردوئے معلیٰ

احساسِ قرب و دوریِ منزل نہیں رہا

ہم فرض کر چکے ہیں کہ ساحل نہیں رہا

 

تسخیرِ کائنات کی سرگرمیاں عبث

زیرِ نگیں ترے یہ اگر دل نہیں رہا

 

ناکامیوں سے مجھ کو ملا عزمِ مستقل

نعم الحصول ہے کہ جو حاصل نہیں رہا

 

نالے فلک شگاف نہیں، آہ نا رسا

دل اب کچھ اعتبار کے قابل نہیں رہا

 

صحنِ چمن میں لالہ و گل ہیں تو سہی مگر

کیا بات ہے کہ شورِ عنادل نہیں رہا

 

تجھ کو جنونِ قیس نہیں ورنہ یہ نہیں

پردہ نشیں کوئی پسِ محمل نہیں رہا

 

سر مست چشمِ ساقیِ خاکِ عرب ہوں میں

بد مستِ نشۂ مئے باطل نہیں رہا

 

مکر و فریب و بغض وعناد و حسد نظرؔ

شائستہ اب قرینۂ محفل نہیں رہا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات