اردوئے معلیٰ

احمد کہُوں کہ حامدِ یکتا کہُوں تجھے

احمد کہُوں کہ حامدِ یکتا کہُوں تجھے

مولٰی کہُوں کہ بندہء مولٰی کہُوں تجھے

 

کہہ کر پُکاروں ساقیِ کوثر بروزِ حشر

یا صاحبِ شفاعتِ کبریٰ کہُوں تجھے

 

یا عالمین کے لِیے رحمت کا نام دُوں

*یا پھر مکینِ گنبدِ خضریٰ کہُوں تجھے

 

ویراں دِلوں کی کھیتیاں آباد تجھ سے ہیں

دریا کہُوں کہ اَبر سَخا کا کہُوں تجھے

 

تجھ پر ہی بابِ ذاتِ صِفاتِ خُدا کُھلا

توحید کا مدرسِ اعلیٰ کہُوں تجھے

 

پا کر اشارہ سورہء یٰسیں کا اِس طرف

دل چاہتا ہے سیدِ والا کہُوں تجھے

 

زہراؓ ہے لختِ دل تو حَسنؓ ہے تری شَبیہہ

زینبؓ کا یا حُسینؓ کا بابا کہُوں تجھے

 

لفظوں نے ساتھ چھوڑ دیا کھو چُکے حَواس

میرے کریم! تُو ہی بتا کیا کہُوں تجھے

 

اُٹھتے ہی ہاتھ بَھر گئیں جھولِیاں مَنگتوں کی

حق تو یہ ہے کہ خَلق کا داتا کہُوں تجھے

 

کرتا ہُوں اختتامِ سُخن اِس پہ اب نصیرؔ

کُچھ سُوجھتا نہیں کہ کیا کیا کہُوں تجھے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ