اردوئے معلیٰ

Search

اذنِ ثنا ہُوا ہے نگہدارِ حرف سے

کاسہ سا اِک بنا لوں مَیں دستارِ حرف سے

 

ممکن نہیں ہے شوق سے تدبیرِ نعتِ نو

بنتی کہاں ہے بات یہ تکرارِ حرف سے

 

جیسے کہ اُن کی شان ورائے شعور ہے

بالا ہے اُن کا اسم بھی مینارِ حرف سے

 

دم بستگی کی ساعتِ تشنہ ہے عینِ نعت

حیرت تو اور بڑھتی ہے اظہارِ حرف سے

 

اُن کے کرم سے ملتی ہے ایجاب کی نوید

ہم کو تو حیلہ کرنا ہے مقدارِ حرف سے

 

نسلوں کو میری رکھنا رہِ نعت پر رواں

عرضی گزار ہُوں مَیں کرم بارِ حرف سے

 

سب بارگاہِ ناز میں تحلیل ہو گئے

لایا تھا چُن کے پھُول جو گُلزارِ حرف سے

 

سُن لیں گے ایک نعت نکیرین قبر میں

پوچھیں گے اور کیا ترے نادارِ حرف سے

 

گرچہ نہیں ہیں آپ کے شایانِ شاں، مگر

لکھتا ہُوں حرفِ نعت مَیں پندارِ حرف سے

 

مقصودؔ اُس کریم کی بخشش کے مَیں نثار

مژدہ سفر کا چمکا ہے آثارِ حرف سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ